Skip to main content

سیب کے فائدے اردو میں

سیب کے فائدے اردو میں

سیب کے فائدے اردو میں

قدرت کی پیدا کردہ بیش بہا نعمتوں میں سے پھل قدرت کی وہ انمول صحت بخش نعمت ہیں جن سے انکار ممکن نہیں۔مسلسل 
تجربات سے یہ حقیقت سامنے آچکی ہے کہ پھل وبائی امراض کے خلاف ڈھال کا فریضہ انجام دیتے ہیں اور جسمانی قوت مدافعت میں اضافے کا ذریعہ ہیں۔پھلوں کی غذائیت میں بیماریوں سے شفا حاصل کرنے کی وہ مخفی قوت موجود ہے 'جس کا حصول کسی اور ذریعہ سے ممکن نہیں۔پھلوں کی مٹھاس پیاس'بھوک مٹانے کا شیریں ذریعہ ہے اور بات ہو خوش ذائقہ صحت بخش پھلوں کی تو ذہن میں سب سے پہلے "سیب" کا نام ضرور آتا ہے جس کے بارے میں یہ مقو لہ بہت عام ہےکہ 
ایک سیب روزانہ کھائیں اور معالج سے دور رہیں"۔"

ماہرین غذائیت نے تحقیق سے ثابت کیا ہے کہ یہ محض مقولہ نہیں بلکہ ایک حقیقت ہے۔ جو لوگ بلا ناغہ ایک سیب کھاتے ہیں ۔صحت ان کے چہرے سے جھلکنے لگتی ہے۔روزانہ ایک سیب کھانے سے ناصرف جسمانی بلکہ ذہنی قوت میں بھی غیر معمولی حد تک اضافہ ہوتا ہے۔ یہی وجہ ہے کہ ماہرینِ نباتات سیب کی غذائیت کو صحت کیلئے اہم ترین جز خیال کرتے ہیں، سیب محض ایک پھل ہی نہیں بلکہ یہ بہترین غذا بھی ہے ' اور حسن کا ذریعہ بھی ' اور اس کے ذائقے کا دارو مدار اس کے استعمال پر ہے۔

سیب کی غذائیت


ماہرین غذائیت کی فراہم کردہ معلومات کے مطابق ایک عدد سیب میں فاسفورس کی اتنی مقدار ہوتی ہے جو انسانی جسم کی ضرورت کو فی الفور پورا کرنے کی صلاحیت رکھتی ہے۔ سیب کے چھلکوں میں حیاتین "سی" کا خزانہ محفوظ ہے جو انسان کی جوان العمری قائم رکھنے کیلئے اکسیر کا درجہ رکھتا ہے۔سیب کا 2/1 حصہ ٹھوس ہوتا ہے جس میں شکر اور پروٹین ہوتی ہے۔باقی حصہ پانی ہوتا ہے۔

 ایک رسیلے میٹھے اور پکے ہوئے سیب میں 08 فیصد پانی شامل ہوتا ہے۔جس میں تمام توانائی سے بھر پور وٹامنز اور منرلز ہوتے ہیں۔سیب میں حیاتین "اے" کی مقدار سب سے زیادہ پائی جاتی ہے۔ حیاتین "بی" تھا یا مین،رائیبوفلاوین اور نایاسنین کی موجودگی بھی سیب کو دیگر پھلوں میں ممتاز کرتی ہے۔

 نشاستہ، فولاد، پروٹین جسم کو قوت عطا کرتے ہیں۔ سیب میں 3۔0ملی گرام فولاد پایا جاتا ہے جو خون کے سرخ خلیات کی کمی پوری کرتا ہے۔ کیلوریز پر مشتمل یہ پھل بعض ایسے معدنی نمکیات کا خزانہ بھی ہےجو جسم کے خلیائی نظام کی نشو و نما میں اہم کردار ادا کرتے ہیں۔ اس پھل میں ملک ایسیڈ کا ایک ریشہ" پیکٹن" موجود ہے جس کے سبب نظام ِہضم میں بہتری آتی ہے۔

کچا سیب بھی ایک کم کیلوریز کا اسنیک یا میٹھا ہے۔ ایک درمیانے سائز کے سیب میں 70 کیلوریز ہوتی ہیں۔ دیگر پھلوں کی طرح سیب میں بھی وٹامن اور منرلز  ہوتے ہیں ۔ سیب کا جوس وٹامن "سی" سے بھر ہور ہوتا ہے، سیب کے چھلکے میں ریشے کی مثیر مقدار پائی جاتی ہے جو سیب کو جزو خون بننھے میں مدد دیتے ہیں۔

ماہرینِ غذا ئیت سیب کوایک دماغی صحت کا حامل پھل قرار دیتے ہیں ۔یہ پھل مضمحل، اداس اور تھکن کے شکار افراد کو تازہ دم کرسکتا ہے۔ سیب کی غذائیت کے حواللے سے جو اہم نکتہ ہے وہ یہ بھی ہے کہ سیب میں ایسے تیزابی مادے پائے جاتے ہیں جو جگر کے افعال میں بہتری پیدا کرتے ہیں ۔

معمر افراد کیلئے سیب ایک جادوئی دوا کی حیثیت رکھتا ہے کیونکہ فاسفورس کی کثیر مقدار جو ڑ وں کی تکلیف سے نجات کا باعث بنتی ہے اور ساتھ ہی سیب کے اجزاء خون میں جمع ہونے والے مضر مادوں کا خاتمہ کرنے میں معاون بنتے ہیں ۔ تاہم ترش ذائقہ سیب مریضوں کیلئے مفید ثابت نہیں ہوتے۔

سیب بطورِ دوا

محقیقن خشک کھانسی،، بھوک کی کمی ، دبلے پن کیلئے سیب ہی تجویز کرتے ہیں کہ سیب کےروزانہ استعمال سے بیماریوں سے محفوظ رہا جاسکتا ہے۔ جدید تجربات کے بعد یہ احتیاط بھی ضروری سمجبی جاتی ہے کہ سیب کھانے کے فوراََ بعد  پانی پینے سے اجتناب برتنا ضروری ہے کیونکہ معدے میں پانی کی موجودگی سے سیب نظامِ ہاضمہ پر بوجھ ثابت ہوتاہے۔جس سے پیٹ میں درد کی شکایت پیدا ہو جاتی ہے اور خالی پیٹ صرف سیب کھایا جائے تو بھی اسی نوعیت کی تکلیف ہوسکتی ہے اس لئے عموماََسیب کو پیٹ درد کا موجب سمجھ لیا جاتا ہے لیکن سیب  کھانے کا بہترین وقت صبح ناشتے کے ایک گھنٹے بعد یا دو پہر کھانے کے بعد کا ہے جبکہ سونے سے پہلے بھی سیب کھانا مفید ثابت نہیں ہوتا۔
روزانہ ایک سیب کھانے والے افراد کی مجموعی صحت میں غیر معمولی بہتری کے آثار نظر آنے لگتےہیں۔ وہ عام افراد کے بر عکس کسی قسم کے فلو، زکام اور موسمی بخار کا شکار نہیں ہوتے جبکہ ما ضی میں وہ اسی نوعیت کی بیماریوں میں مبتلا رہے تھے۔ روزانہ سیب کھانےوالے افراد کے خون میں فرخ خلیات کی مقدار مناسب حد تک بڑھ جاتی ہے جو جسم میں مدافعتی قوت بڑھانے کا سبب بھی ہے۔

سیب کے گودے میں ایسے اجزاء پائے جاتے ہیں جو دانتوں کی بیماریوں کے خاتمے کا سبب بنتے ہیں اور منہ میں پیدا ہونے والے جراثیم کو ہلا ک کردیتے ہیں یہی نہیں بلکہ دانتوں کی چمک اور مسوڑھو کی صحت میں سیب کے معجزاتی اجزاء اہم کردار ادا کرتے ہیں....

Comments

Popular posts from this blog

Puberty | All About Puberty Ages, Signs and Changes |

Puberty (Blooghat) kya hae:Puberty yani blooghat wo waqt hota hai jab baccha jismani physically nafsiyaati psychologically aur zehni taur par pakka hone aur badhne lagta hai. In saari changes aur badlao ka koi ek waqt fixed nahi hota balke har kisi ladka aur ladki me iska waqt alag alag umar me hosakta hai. Agar zyada khulle andaz me kaha jae to ladka ya ladki baligh hone ka matlab ab wo bacche paida karne ke qabil hojate hai. Jesa ke aap log jante honge ke pehle zamane me ladka 16 ya 17 saal ka aur ladki 13 ya 14 saal ki umar me shadi kardi jati thi aur unke bacche bhi hojate the yani jese hi wo baligh hojate the unki shadi kardi jati thi magar abhi aisa nahi hota balke dono ko qanoni taur par baligh hona zarori hai aur uski ek umar fixed kardi gai hai  aur usse pehle shadi karna qanonan jurm hai jo ki ek tarah se theek hai ab ke mahool ke hisaab se.

Blooghat ya puberty ke waqt hormones ke changes aur uske kaam karne ki wajah se jism zyada tezi se badhne lagta hai
Hormones kya hai?Ek k…

What is Sperm | know about Sperm and Semen with |

Semen ya Sperm kya hai?Puberty ya bulooghat ke baad Testicles (khusiye) me lagatar banne wali rutoobat ya fluid ko Semen, sperm ya mani kaha jata hai.
Ye paida hokar Seminal vessels me jama hoti rehti hai aur inzal ya ejaculation ke waqt baher nikal jati hai.
Semen ek white aur gadhi rutobat ya fluid hai aur iski khaas qism ki smell hoti hai jise Seminal odour kehte hain. ye rutobat halki se alkaline hoti hai. Semen ke do hisse hote hain. Liquor seminal: Ye ande ki sufedi ki tarah se saaf aur transparent hoti haiGranules seminal: Ye chote chote daane dar rutobat hoti hai jiske andar karam e mani yani Sperms hote hainEjaculation ya inzal ke waqt ek healthy mard ki mani ya semen 2 se 5 ML hoti hai. aur isme sub se ahem cheez sperms hote hain.
Types of semenSemen ko 4 qismon me divide kya gaya hai
1.Naqis mani ya week semen: Isme gadha pan ya thickness aur sperms kam hote hain aur ye sperm kapde par dry hone ke bad akdao paida nahi karti yani iske lagne ke baad dry hojae to bhi kapda akadta na…

Onion Benefits

Is post me aapko Onion benefits yani pyaz ke faide aur uski kahsiyat aur ilaj ke bare me padhne ko milega onion yani pyaz duniya ki mashor aur aam sabzi hai jis ke bina koi salan ya curry pakana mumkin hi nahi aur na hi salan uske bina mazedar banta hai. Iski bhi kuch qisme hain magar har qism ki onion ke faide bilkul ek jese hi hai. Pyaz qudrat ka anmol tuhfa hai. Pyaz ko handi me masale ki jagah istemal kya jata hai iska achar bhi sirka me milakar banaya jata hai aur iski chatni bhi tayyar ki jati hai.Onion benefits se pehle ye janna zarori hai ke pyaz ugti kese hai. Pyaz ek aisi sabzi hai ke iski fasl me pyaz ki gatthi bilkul zameen ke upar hoti hai aur uski jaden zameen ke andar dhansi hoti hain.


Onion ya pyaz ke andar ek aisi khushbo hoti hai jo hawa me ud kar phel jati hai. pyaz kayi tarah se hamari ghiza ka hissa banti hai, use paka kar use ubal kar use bhoon kar use tal kar use steam karke ya kaccha kisi bhi tarah se khaya jasakta hai aur onion benefits ke andar ek baat khas ba…